Prophet Muhammad (PBUH) – 3

By November 29, 2020 December 13th, 2020 Projects

Coming soon…

حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی 63 سالہ زندگی کے مختلف ادوار کی 6 پیپر کٹنگ آرٹ میں مختصر منظر کشی کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔ ان 6 ادوار کی منظر کشی پیپر کٹنگ آرٹ میں توصیف احمد ڈاٹ کام پر 6 پراجیکٹ کی صورت میں دستیاب ہے۔ یہ تمام آرٹ ورک گولڈن اور بلیک ورق کو کاٹ کربنایا گیا ہے۔ ان 6 آرٹ پیس میں سے ہر آرٹ پیس ایک مکمل سٹوری اور واقعہ پیش کرتا ہے۔ تیسرے آرٹ ورک  کا موضوع ہے  بیت المعمور ۔بیت المعمور کا لغوی معنی ہر وقت آباد رہنے والاگھر یعنی جس میں ہروقت اور ہر لمحے اللہ تعالیٰ کی عبادت ہورہی ہو۔ ایسا گھر جو ہر وقت اللہ کے ذکر سے آباد رہے۔بیت المعمور کی لوکیشن بیت اللہ کے بالکل اوپر ساتویں آسمان پر ہے۔ احادیث اور سورۃ الطور کی آیت نمبر چار کی تفسیر میں مفسرین لکھتے ہیں کہ بیت المعمور سے مراد ساتویں آسمان پر موجود ایک مکان ہے۔چونکہ پچھلا آرٹ ورک اسریٰ و معراج شریف کے موضوع پر تھا اس لیے اُسی سفر میں نبی کریم  صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی ملاقات ساتویں آسمان پر بیت المعمور میں حضرت ابراہیم علیہ السلام سے بھی ہوئی تھی جو بیت المعمور کی دیوار کے ساتھ ٹیک لگا کر بیٹھے ہوئے تھے۔چنانچہ مسلم شریف کی حدیث نمبر 411  میں ہے کہ جبریل علیہ السلام کے ساتھ جب حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ساتویں آسمان پہ چڑھے تو وہاں ان کی ملاقات ابراہیم علیہ السلام سے ہوئی۔ بیت المعمور کے مختصر سے تعارف کے بعد موضوع کی طرف یعنی تیسرے آرٹ ورک کی مختصر تشریح کی طرف بڑھتے ہیں۔ آرٹ ورک میں نیچے بیت اللہ یعنی خانہ کعبہ دکھایا گیا ہے اور اُس کے گرد امت مسلمہ کو حج، عمرہ اور عبادت کرتے دکھایا گیا ہے۔ چونکہ حج و عمرہ کے طواف کے چکر میں یہ دعا پڑھنا احادیث اور سنت سے ثابت ہے۔ ربنا اتنا فی الدنیا حسنۃ و فی الاخرۃ حسنۃ وقنا عذاب النار۔ اے ہمارے رب ہمیں دنیا میں بھی بھلائی عطا فرما اور آخرت میں بھی بھلائی سے نواز اور ہمیں دوزخ کے عذاب سے محفوظ رکھ۔ سورۃ بقرہ کی آیت نمبر 201 میں بھی یہ دعا مذکور ہے۔ اس لیے اس دعا کو اوول Ovalیعنی حجر اسود کی شکل میں دکھانے کی کوشش کی گئی ہے۔جس کا مطلب یہ بنتا ہے کہ امت مسلمہ کو چاہیے کہ حجر اسود کو چومنے کے ساتھ ساتھ حضورصلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی اس پسندیدہ دعا سے بھی محبت کریں اورہمیں چاہیے کہ اس دعا کو اپنی دعاؤں میں ضرور شامل کریں۔ اس دعا کا اگر ترجمہ دیکھا جائے تو ایک کونسیپٹ بالکل کلئیر ہوجاتا ہے کہ درویشی اور تصوف میں جو یہ تصور ہے کہ صرف آخرت ہی مانگنی چاہیے اور کہتے ہیں کہ ہمیں دنیا کی کوئی پرواہ نہیں ہے۔ اُن لوگوں کو اپنے عقیدہ پہ غور کرنا چاہیے کہ اس دعا میں دنیا کی تمام حسنات کو پہلے رکھا گیا ہے مثلا صحت، اہل و عیال کی صحت، رزق حلال میں وسعت و برکت وغیرہ سب دنیا کی حسنات ہیں۔  اور اس کے بعد آخرت کی حسنات کو رکھا گیا کہ جب صحت ہوگی، گھرانہ خوشحال ہوگا،ذہنی طور پر ریلیکس ہونگے تو عبادت کرکے آخرت کی حسنات حاصل کی جاسکتی ہیں۔ اس لیے دنیاو آخرت کی بھلائی مانگنا کوئی غلط نہیں ہے۔ اس دعا کے بالکل اوپر بیت المعمور دکھایا گیا ہے۔ جیسا کہ پہلے بتایا جاچکا ہے کہ بیت المعمور ساتویں آسمان پر موجود ایک مکان ہے۔ بیت المعمور کے ارد گرد دو پتیوں والے پھول دکھائے گئے ہیں۔جن سے مراد اللہ تعالیٰ کی نوری مخلوق فرشتے ہیں۔ جو ہر وقت بیت المعمور کا طواف کررہے ہیں۔مسلم شریف کی حدیث نمبر 411  میں ہے کہ بیت المعمور میں ایک وقت میں ستر ہزار فرشتے داخل ہوتے ہیں اور طواف کرتے ہیں۔ جوایک دفعہ داخل ہوتے ہیں وہ دوبارہ داخل نہیں ہوتے کیونکہ اللہ تعالیٰ کی عبادت کے لیے فرشتوں کی تعداد ہی اتنی زیادہ ہے کہ پہلے والوں کی دوبارہ باری ہی نہیں آتی۔ یہاں سے مزید واضح ہوتا ہے کہ اللہ تعالیٰ کو اگر انسان سے اپنی عبادت ہی کروانی ہوتی تو عبادت کے لیے اللہ تعالیٰ کو فرشتوں کی کمی نہیں تھی۔ انسان اگر اللہ تعالیٰ کی بڑائی اور عظمت بیان کرتا ہے تو اس میں انسان کا اپنا ہی فائدہ ہے۔ ہماری عبادتیں نہ کرنے سے اللہ کریم کی عظمت اور بزرگی میں کوئی فرق نہیں آتا۔ دوسری بات اگر موجودہ کورونا صورتحال کو دیکھا جائے تو جہاں حفاظتی قدامات کو مدنظر رکھتے ہوئے باقی سرگرمیاں معطل ہوئی تھیں وہاں مساجد میں عبادات بھی متاثر ہوئی تھی۔ انہی حفاظتی اقدامات کے تحت جب خانہ کعبہ کو طواف، عمرہ اور عبادت کے لیے بند کیا گیا تھا تو لوگ پریشان ہوگئے تھے کہ طواف بند ہوگیا۔اہل ایمان کو گھبرانا نہیں چاہیے کیونکہ ہماری تسلی کے لیے اتنا ہی کافی ہے کہ اوپر ساتویں آسمان پہ ہر وقت ستر ہزار فرشتے بیت المعمور کا طواف کررہے ہیں۔ اللہ تعالیٰ سے دعا کریں کہ وہ ہمیں ہرقسم کے موذی مرض اور تکالیف سے محفوظ رکھے کہ ہم آسانی اور صحت کے ساتھ اللہ تعالیٰ کی بہتر انداز میں عبادت کر سکیں۔ اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ اللہ کریم ہماری آنکھوں کو خیرا کرنے والے مناظر دکھائے۔ یا اللہ ہم نیکی دیکھنا چاہتے ہیں ہمیں بدی نہ دکھانا۔ہمیں اپنے فضل و کرم اور نورکے وہ مناظر دکھا کہ جس کے بعد ہمیں تیری رحمت کے دائرے میں داخل ہوجائیں۔یا اللہ ہمیں دشمن کے شر سے محفوظ رکھ۔ آمین یا رب العالمین۔

admin

Author admin

More posts by admin